وہ لاہور میں سی ای او ریلوے آفتاب اکبر کی ریٹائرمنٹ کے موقع پر عشائیے سے خطاب کر رہے تھے جس میں شیخ رشید کا کہنا تھا کہ ہم نے درجنوں نئی ٹرینیں چلائیں اور مزید ٹرینیں بھی چلائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ایم ایل ون منصوبہ عمران خان کی قیادت میں مکمل ہو گا، مال گاڑیوں کی تعداد بڑھائیں گے اور ریلوے کے ذریعے پاکستان کی برآمدات میں اضافہ کریں گے لیکن وہ یہ اعتراف بھی کر گئے کہ وہ ریلوے میں انقلاب نہیں لا سکے۔ اس ناکامی کی وجہ انہوں نے یہ بتائی کہ یہاں سیاست بہت ہے۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ ریلوے میں کوئی کرپشن ہوئی تو وہ خود اس کے ذمہ دار ہوں گے کیونکہ وزیر کے بغیر کرپشن ممکن ہی نہیں ہے۔

کشمیر کی صورت حال پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ کشمیر کی جنگ الیکٹرانک میڈیا نے لڑی ہے، مسئلہ کشمیر پر سب کو ایک پلیٹ فارم پر کھڑا ہونا چاہیے۔  چور لٹیروں سے اگر آئی ایم ایف اور ریکوڈیک کے برابر ریکوری ہوتی ہے تو ان سے جان چھڑا لینی چاہیے لیکن وزیراعظم کسی عمران خان کسی کو این آر او نہیں دیں گے۔