پی آئی اے کی پائلٹس ایسوسی ایشن پالپا کا کہنا ہے کہ کام کے دباو اور غیرسازگار ماحول کی وجہ سے پائلٹس کے لئے کام کرنا مشکل ہوتا جا رہا ہے جس وجہ سے کئی پائلٹس مستعفی ہو چکے ہیں اور اکثر اس آپشن پر غور کر رہے ہیں۔

اپنے ایک جاری اعلامئے میں پالپا کا کہنا ہے کہ غیرسازگار ماحول کی وجہ سے پی آئی اے کا ٹیلنٹ ضائع ہو رہا ہے، رواں برس سے اب تک 8 پائلٹس مستعفی ہو چکےہیں جبکہ کئی دیگر پائلٹس بھی اس آپشن پر غور کر رہے ہیں۔ پائلٹس کے مستعفی ہونے کی بڑی وجہ ناقص پالیسیاں اور ائرلائن کے فلائیٹ شیڈول کا غیرمنصفانہ ہونا ہے۔

مستعفی ہونے والے پائلٹس خود بھی یہ کہہ چکے ہیں کہ انہیں کام کے دباو اور سنگین نتائج کا سامنا تھا جس وجہ سے وہ مزید کام جاری نہیں رکھ سکتے تھے۔ پالپا کے صدر رضوان گوندل پائلٹس کو درپیش مسائل کے بارے میں سول ایوی ایشن کے ڈی جی کو خط کے ذریعے آگاہ کر چکے ہیں کہ  پی آئی اے نے حال ہی میں فلائٹ ڈیوٹی ٹائم لمیٹیشن (ایف ڈی ٹی ایل) میں تبدیلیاں کی تھیں جس کی وجہ سے پائلٹس کو شدید دباؤ میں کام کرنا پڑرہا ہے۔

پاکستان انٹرنیشنل ائرلائن

انہوں نے لکھا کہ یہ اضافی فلائٹس پالپا اور پی آئی اے میں 2011-2013 میں کئے جانے والے معاہدے کی خلاف ورزی ہے اور اس نئی صورتحال میں پائلٹس کے آرام کیلئے مختص کردہ وقت انہیں نہیں دیا جارہا ہے جب کہ فلائٹس سے پہلے اور فلائٹس کے بعد پائلٹس کیلئے آرام کے دورانیے کی وضاحت ان کے روسٹر میں بھی نہیں کئی گئی ہے۔

پی آئی اے کے پائلٹس کے لئے اس ماحول میں کام کرنا مشکل ہوتا جا رہا ہے۔