پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس کل 12 ستمبر بروز جمعرات ہونے جارہا ہے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی خطاب کرینگے۔

ملکی حالات، بھارتی اقدامات، کشمیرمیں مظالم، خطے کے ممالک سے تعلقات صدر مملکت کے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کا حصہ ہونگے، صدرمملکت پی ٹی آئی حکومت کے پہلے سال کی کارکردگی کا احاطہ کرنے کے ساتھ رہنمائی بھی کرینگے

ہرپارلیمانی سال کی آغاز پر پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلایا جاتا ہے جس سے صدرمملکت خطاب کرتے ہیں۔ اسی آئینی تقاضے کو پورا کرنے کیلئے دونوں ایوانوں کا مشترکہ اجلاس کل شام چار بجے ہونے جارہا ہے۔

صدر مملکت کے خطاب پرمبنی اجلاس کا یک نکاتی ایجنڈا جاری کردیا گیا، اجلاس کا آغاز تلاوت کلام پاک، نعت اورقومی ترانے سے ہوگا جس کے بعد اسپیکراسد قیصر صدرعارف علوی کو خطاب کی دعوت دیںگے۔

صدر مملکت حکومت کوآئندہ کی گائیڈ لائن اور تجاویز دیںگے، اس کے ساتھ ساتھ ملکی موجودہ صورتحال پر بھی اظہارخیال کرینگے۔

صدرعارف علوی مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم، کشمیریوں کے انسانی حقوق، کرفیو اوردنیا سے رابطہ منقطع ہونے کے متعلق بھی بات کرینگے۔

مشترکہ اجلاس میں وزیراعظم، اراکین پارلیمنٹ، چئیرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سمیت تینوں سروسز چیف، اور سفرا سمیت دیگر اعلی حکام بھی شرکت کرینگے۔

واضح رہے کہ پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس 30 اگست بروز جمعہ کے لئے بلایا گیا تھا لیکن حکومت کی طرف سے اس روز کشمیر آور منانے کا اعلان کیا گیا جس پر پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس موخر کر دیا گیا۔

اس سے قبل قومی اسمبلی کا اجلاس بھی دو ستمبر کو شام چار بجے کے لئے طلب کیا گیا تھا جسے بعض ناگزیر حالات کی وجہ سے موخر کر دیا گیا۔

صدر نے دونوں اجلاسوں کو منسوخ کرنے کی منظوری آئین کے آرٹیکل 54 کی شق 1 کے تقویص اختیارات کے تحت دی تھی۔