پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں حالات نارمل دکھانے کی بھارتی کوشش مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت کی طرف سے جعل سازی کرکے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کو نارمل دکھانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

دفترخارجہ سے جاری اعلامئے کے مطابق ترجمان دفترخارجہ نے بھارتی قومی سلامتی کے مشیر کا کشمیر میں سب کچھ نارمل دکھانے کا دعوٰی مسترد کر دیا ہے اور کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر بدستور دنیا کی سب سے بڑی قیدگاہ بنا ہوا ہے اور وہاں تاریخ کی سب سے زیادہ فوجی تعیناتی چل رہی ہے۔

 ترجمان کا کہنا ہے کہ بھارت جان بوجھ کر جعل سازی کر رہا ہے اور مقبوضہ کشمیر کی تسلیم شدہ بین الاقوامی حیثیت تبدیل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ کشمیری قیادت بالخصوص حریت قیادت گھروں اور جیلوں میں بند ہے۔ بے گناہ کشمیریوں کو گرفتار کیا جا رہا ہے انہیں نظربند کیا جا رہا ہے اور انکے باقی دنیا سے رابطے منقطع کئے جا رہے ہیں

انہوں نے کہا ہے کہ عالمی میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیمیں آوازیں اٹھا رہی ہیں، بھارتی فوجی بلٹ گنز کا استعمال جاری رکھے ہوئے ہیں۔

ترجمان دفترخارجہ نے بھارتی مشیر قومی سلامتی کے دعووں کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ عالمی برادری بھارت کے کسی بھی متوقع جھوٹے آپریشن کی سنگینی کو سمجھے اور مقبوضہ کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا نوٹس لے۔

ترجمان دفترخارجہ نے بھارت کو بھی تنبیہہ کی ہے کہ وہ کشمیر کے حوالے سے اپنے عالمی معاہدوں کی پاسداری کرے اور کشمیری عوام کو انکا حق خودارادیت دے جو انکا بنیادی حق ہے۔