مالدیپ میں سپیکرز کانفرنس جاری تھی جس میں پاکستان کی جانب سے کشمیر کا مسئلہ اٹھایا گیا اور بھارتی لوک سبھا کے سپیکر نے احتجاج شروع کر دیا۔

ڈپٹی سپیکر قاسم سوری مالدیپ میں سپیکرز کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں

یہ پہلا موقع تھا کشمیر کی آئینی حیثیت کے خاتمے کے بعد کہ پاکستانی اور بھارتی وفود کسی بین الاقوامی فورم پر آمنے سامنے آئے۔

ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی قاسم سوری نے کشمیر کے مسئلے پر آواز اٹھائی اور بھارتی سرکار کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں کئے جانے والے مظالم پر دنیا کی توجہ مبزول کروائی۔

پاکستان کے اراکین پارلیمنٹ نے دنیا کو بھارتی مظالم کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا۔

ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کی تقریر کے دوران کشمیر سے اظہارِ یکجہتی پر بھارتی وفد نے ہنگامہ کھڑا کر دیا اور بھارتی لوک سبھا کے اسپیکر اوم برلا نے اپنے وفد کے ہمراہ شور شرابا شروع کر دیا۔

ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم سوری نے بھارتی وفد کے شور کے باوجود مقبوضہ کشمیر میں بھارتی بربریت کا پردہ فاش کرنے کا سلسلہ جاری رکھا اور کشمیریوں کے لیے بھرپور آواز اٹھائی۔

ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی نے اپنی تقریر کے دوران مقبوضہ کشمیر میں بھارتی عزائم پوری دنیا کے سامنے بے نقاب کیے اور اپنی نشست پر واپس آکر بھی بھارتی وفد پر خوف برسے۔

بھارتی لوک سبھا کے سپیکرز کی احتجاج کرتے ویڈیو کے لئے نیچے کلک کریں