چئیرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ وفاقی وزیر قانون نے کراچی پر قبضے کا منصوبہ بنایا ہے، اگر ایسی کوئی کوشش کی گئی تو وفاقی حکومت کو گھر جانا پڑے گا۔

وہ حیدرآباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے، انکا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کسی صورت سندھ کے خلاف کوئی سازش کامیاب نہیں ہونے دے گی، یہ کسی صورت نہیں ہونے دیں گے کہ کراچی کو اسلام آباد سے کنٹرول کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ آمر اٹھارویں ترمیم پر حملہ کر رہے ہیں اور ہم نے اس ترمیم کے ذریعے سے 1973 کے اصل آئین کو بحال کیا تھا لیکن ہمارے وزیراعظم سندھ میں آکر کہتے ہیں کہ وفاق صرف اس ترمیم کی وجہ سے دیوالیہ ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک چلانا کوئی کرکٹ میچ نہیں ہے، ایسی حرکتوں کی وجہ سے ہی ملک پہلے بھی ٹوٹ چکا ہے۔

بلاول بھٹو نے مزید کہا کہ وہ اس کٹھ پتلی حکومت کو سندھ اور اسکے وسائل پر قبضہ نہیں کرنے دیں گے۔ عمران خان نے ملک میں لوگوں کو سیاسی قیدی بنا رکھا ہے، اس کٹھ پتلی حکومت کا ظلم و ستم جاری ہے اور عوام سے اسکے بنیادی حقوق بھی چھینے جا رہے ہیں۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی کا کام عوام کو خوش رکھنا نہیں ہوتا بلکہ وہ اپنے آقاوں کو خوش رکھتے ہیں اور عوام پر مہنگائی کا بوجھ ڈالتے ہیں۔ جب پاکستان پیپلز پارٹی کی حکومت آئی تو ملک دہشتگردی کا شکار تھا لیکن مشکلات کے باوجود آصف علی زرداری نے ملک کو سنبھالا اور ان مشکل حالات میں بھی غریب عوام کو ریلیف دینے کی کوشش کی گئی۔