وزرات خزانہ کے اعلامیے کے مطابق حکومت نے مالی سال 19-2018 میں 3 ہزار 440 ارب روپے قرض لیا، حکومت نے قرضہ بجٹ خسارہ پورا کرنے کیلئے لیا، جبکہ گزشتہ سال 11 ہزار ارب کا قرض لینے کی خبریں درست نہیں۔

اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ نجی شعبے کے غیرملکی قرضوں میں گزشتہ سال 900 ارب روپے اضافہ ہوا، نجی شعبے کے غیرملکی قرضوں کی ذمہ داری حکومت کی نہیں ہے۔

فائل فوٹو: پاکستانی کرنسی

وزارت خزانہ کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال 500 ارب روپے قرض سرکاری اداروں کی مالی ضروریات کیلئے لیا گیا۔

وزارت خزانہ کے اعلامئے کے مطابق قرضوں میں 4 ہزار270 ارب روپے کا اضافہ روپے کی قدر میں کمی سے ہوا، گزشتہ حکومت نے روپے کی قدر میں مصنوعی اور غیرحقیقی استحکام رکھا۔

اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ حکومت کی ناقص پالیسوں سے بھاری کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ ہوا جس پر قابو پانے کیلئے روپے کی قدر میں کمی لانا پڑی جبکہ مالی سال 19-2018 میں قرضوں اور ادائیگیوں کی مد میں 10 ہزار 330 ارب روپے اضافہ ہوا۔