آئی ایم ایف کے وفد کا چار روزہ دورہ پاکستان مکمل ہونے پر اعلامیہ جاری کر دیا گیا۔ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ دورے کے دوران پاکستان کی معاشی صورتحال کا جائزہ لیا گیا اور معاشی اہداف کے حصول پر بھی بات چیت ہوئی۔

اعلامئے کے مطابق اصلاحاتی پراگرام سے پاکستان کے کچھ شعبوں میں بہتری آ رہی ہے، رواں مالی سال کے دوران شرح نمو دو اعشاریہ چار فیصد رہنے کا امکان ہے جبکہ آئندہ چند ماہ کے دوران مہنگائی میں بھی کمی متوقع ہے۔

اعلامیے میں تجویز کیا گیا ہے کہ مانیٹری پالیسی کی مدد سے مہنگائی پر قابو پایا جا سکتا ہے، مانیٹری پالیسی افراط زر کو کنٹرول کرنے میں معاون ثابت ہورہی ہے جبکہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے اپن فارن ایکسچینج بفر کو بہتر بنایا ہے۔

یف بی آر کی جانب سے محصولات کے حصول بہتر اقدامات اٹھائے گئے ہیں، حکومتی اخراجات میں کمی کے حوالے سے بھی اقدامات نظر آئے ہیں ، مالی سال 2019-20 میں گرچہ معاشی معاملات بدتر ہونے کا تجزیہ کیا گیا تھا، جو عوامل اس میں کارفرما تھے ان میں بھی بہتری آئی ہے۔

اعلامیے کے مطابق پاکستان کو دیئے گئےایکسٹینڈڈ فنڈ فیسیلٹی پروگرام کے تحت پہلے اقتصادی جائزے کے لیے آئی ایم ایف کا جائزہ مشن اکتوبر میں پاکستان آئے گا۔