وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے جنیوا میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کونسل کے اجلاس کے موقع پر عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر ٹیڈروس سے ملاقات کی۔

وزیر خارجہ نے ڈاکٹر ٹیڈروس کو مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی جانبب سے گزشتہ 35 دن سے نافذ کئے گئے کرفیو کے باعث کشمیریوں کی زندگیوں کو درپیش خطرات سے آگاہ کیا۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی جنیوا میں عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر ٹیڈروس سے ملاقات کر رہےہیں

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں پانچ اگست سے مسلسل کرفیو نافذ کر رکھا ہے، صورتحال اس قدر تشویشناک ہے کہ خوراک اور دوائیں تک میسر نہیں۔ حاملہ خواتین، بچوں اور بوڑھوں کو طبی سہولیات فراہم کرنے میں شدید دشواری کا سامنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ صورتحال ایک نئے انسانی المیے کے رونما ہونے کی نشاندہی کر رہی ہے۔ عالمی ادارہ صحت لاکھوں نہتے کشمیریوں کی زندگیاں بچانے کیلئے فوری اقدامات کرے۔