وزیرمملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے کے پی کے حکومت کے سکول کی بچیوں کے لئے حجاب لازم قرار دینے کے بعد اپنا فیصلہ واپس لینے پر سخت برہمی کا اظہار کیا ہے۔

وزیر مملکت نے سوشل میڈیا پر اپنے بیان میں کہا ہے کہ کے پی کے حکومت کی جانب سے سکول کی بچیوں کے لئے حجاب کو لازم قرار دینا ایک احسن اقدام ہے۔ یہ اقدام عین اسلامی اور ریاست مدینہ کے آئین کے مطابق ہے۔

وزیرمملکت نے کہا ہے کہ اس حکم نامے کو عجلت میں واپس لیا گیا ہے جس سے وہ اتفاق نہیں کرتے بلکہ چاہیں گے کہ یہ حکم نامہ واپس بحال کیا جائے۔

علی محمد خان کا کہنا تھا کہ وہ اس حکم نامے کو واپس بحال کرانے کے لئے وزیراعلیٰ خیبرپختونخواہ اور وزیراعظم عمران خان سے بات کریں گے۔

واضح رہے تین روز قبل پشاور کی ضلعی ایجوکیشن افسر برائے خواتین کی جانب سے ایک سرکلر جاری ہوا تھا جس میں ہری پور میں سکول طالبات کے لئے عبایا لازم قرار دیا گیا جسے سوشل میڈیا پر بحث میں آنے کے بعد شام تک منسوخ کر دیا گیا تھا۔