اسحاق ڈار کو ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کا حکم

 سپریم کورٹ نے سینیٹ الیکشن سے متعلق کیس میں اسحاق ڈار کو ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کا حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ پتہ کرکے بتائیں اسحاق ڈار کب آئیں گے؟ ہم انہیں عبوری ضمانت دے دیں گے

سپریم کورٹ میں سابق وزیرِخزانہ اسحاق ڈار کی سینیٹ اہلیت کیس کی سماعت ہوئی، دوران سماعت چیف جسٹس نے اسحاق ڈار کے وکیل سلمان اکرم راجہ سے استفسار کیا کہ آپ نے ہمارا آخری حکم نامہ پڑھا ہے؟ اسحاق ڈار کہاں ہیں؟ انہیں لے کر آئیں، جس پر وکیل سلمان اکرم راجہ نے اسحاق ڈار کا میڈیکل سرٹیفکیٹ جمع کراتے ہوئے جواب دیا کہ میرے مؤکل بیمار ہیں

چیف جسٹس نے میڈیکل سرٹیفکیٹ مسترد کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ اسحاق ڈار اتنے عرصے سے بیمار نہیں ہوسکتے، عدالتی حکم میں انہیں ذاتی طور پر پیش ہونے کا کہا گیا تھا اور یہ حکم خلاف ورزی کے لئے جاری نہیں کیا گیا تھا، وہ آجائیں عدالت سابق وزیرِخزانہ کو حفاظتی ضمانت دے گی، ہم 8 بجے رات تک بیٹھیں ہیں اسحاق ڈار سے پوچھ کر بتائیں وہ کب آئیں گے، عدالت نے کیس کی سماعت میں رات 8 بجے تک وقفہ کردیا

چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ نہیں پتہ اسحاق ڈار بیمار ہیں یا بیرون ملک سہولیات سے لطف اندوز ہو رہے ہیں، عدالت صرف یہ دیکھے گی کہ مفرور شخص الیکشن لڑ سکتا ہے یا نہیں۔انہوں نے درخواست گزار کے وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ان کا یہ اعتراض ہے کہ انتخابی خرچ کے لیےمفرور شخص بینک اکاونٹ کیسے کھول سکتا ہے ، سوال یہ ہے کہ کسی شخص کی غیر موجودگی میں کیا اسکا بینک اکاؤنٹ پاکستان میں کھولا جاسکتا ہے۔ درخواست گزار کے وکیل کا کہنا تھا کہ اسحاق ڈار کیس میں ہائیکورٹ کے جج صاحب نے شاید یہ کہا کہ مفرور ملزم زیر سماعت مقدمے کے علاوہ کسی اور فورم سے رجوع کر سکتا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *