چیئر مین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کہتے ہیں کہ شوکت خانم کو ورلڈ کلاس اسپتال ہونے کا سرٹیفیکیٹ ملا۔ خیبر پختونخوا میں ہماری کوشش تھی کہ سرکاری اسپتالوں کوشوکت خانم کے معیار کا بنائیں۔

اسلام آباد میں پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے  میڈیا سے گفتگو کی۔

گفتگو میں انہوں نے کہا کہ سمجھنے کی چیز یہ ہے ہمارے سرکاری اسپتال، پرائیویٹ اسپتال کا مقابلہ کیوں نہیں کرسکتے؟ کیوں پیسے والے علاج کروانے کیلئے پرائیویٹ اسپتال جاتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ  شوکت خانم کو ورلڈ کلاس اسپتال ہونے کا سرٹیفیکیٹ ملا۔ خیبر پختونخوا میں ہماری کوشش تھی کہ سرکاری اسپتالوں کوشوکت خانم کے معیار کا بنائیں۔

انہوں نے کہا کہ سرکاری اسپتالوں کا معیار بڑھانے کے پیچھے پانچ سالوں کی جدوجہد ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ چیف جسٹس نے ہمارے اسپتالوں کو نوٹس لیا۔ کل چیف جسٹس پختونخوا جارہے ہیں، ہم چیف جسٹس کو ویلکم کہتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ چیف جسٹس جو کام کررہے ہیں وہ حکومت کو کرنا چاہیئے۔

انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس بے شک ایکسپرٹ کی کمیٹی بنائیں۔ جو خیبرپختون خوا میں ہوا اور جو باقی صوبوں میں ہواسامنے آنا چاہیئے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ میں چاہتا ہوں چیف جسٹس سنیں ہمیں کیا کیا مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

سربراہ پی ٹی آئی کا کہنا تھا کہ  معلوم ہونا چاہیئے کس حکومت نے لوگوں کا کام کیا۔ لوگ بار بار پوچھتے ہیں خیبرپختون خوا میں کیا کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ کسی نے وہ اصلاحات نہیں کیں جو ہم نے کیں