انسداد دہشت گردی عدالت نے نقیب اللہ قتل کیس میں راؤ انوار کی درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔

انسداد دہشت گردی عدالت میں نقیب اللہ قتل کیس کی سماعت ہوئی۔مدعی وکیل نے دلائل پیش کئے۔ مدعی وکیل کی جانب سے اہم تفصیلات پیش کی گئی، جس میں بتایا گیا کہ نقیب اللہ کو ساتھیوں سمیت3 بج کر 21 منٹ پر جعلی مقابلے میں قتل کیا گیا جبکہ راو انوار مقابلے سے پہلے ہی 1 بج کر 21 منٹ پر پریس کانفرنس میں نقیب اللہ اور دیگر ساتھیوں کے قتل کی تصدیق کی کرچکے تھے۔

ایڈوکیٹ صلاح الدین نے عدالت کو بتایا کہ راو انوار نے میڈیا نمائندوں کو فون کرکے جعلی مقابلے سے متعلق آگاہ کیا اور جائے وقوعہ پر بلایا، جس پر عدالت نے راؤ انوار کی پریس کانفرنسز کی سی ڈیز طلب کرلیں ۔

طویل سماعت کے بعد عدالت نے راؤ انوار اور اس کے ساتھیوں کی درخواست ضمانت سے متعلق عدالت نے فیصلہ محفوظ کرلیا، فیصلہ 10جولائی کو سنایا جائے گا۔