قصور میں جنسی زیادتی کے بعد قتل ہونے والی ننھی زینب کے والد نے تحفظ فراہم کرنے کیلئے سپریم کورٹ میں درخواست جمع کرا دی ہے

 

 زینب کے والد امین انصاری نے سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں تحفظ کے لیے درخواست جمع کرا دی جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ مجرم عمران کے اہل خانہ مسلسل ہراساں کررہے ہیں

درخواست میں کہا گیا ہے کہ مجرم عمران کے سہولت کاروں سے متعلق تفتیش نہیں کی گئی، زینب کے والد نے مطالبہ کیا ہے کہ سہولت کاروں کو گرفتار کیا جائے۔

 گزشتہ دنوں قصور کی ننھی زینب کے قاتل عمران نے لاہور ہائی کورٹ سے اپیل کی ہے کہ اقرار جرم کرنے کی وجہ سے اس کی سزا میں نرمی کی جائے

مجرم عمران نے تین صفحات پر اپیل میں موقف اختیار كیا تھا كہ دوران ٹرائل اس نے عدالت كا قیمتی وقت بچانے كے لیے عدالت كے سامنے اقرار جرم كیا اور ترقی یافتہ ممالک میں اقرار جرم كرنے والے مجرموں كے ساتھ عدالتیں نرم رویہ اختیار كرتی ہیں لیکن اقرار جرم کے باوجود عدالت نے اس كے ساتھ نرم رویہ اختیار نہیں كیا اور اسے سزائے موت اور دیگر سزاؤں کا حکم سنایا