“انکل ٹرمپ کی چالاکیاں”
این آر جی سٹیڈیم میں ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے مودی اور ٹرمپ کا دوستانہ تو فلم “دوستانہ” کے کرداروں کی محبت اور ساتھ کو بھی پیچھے چھوڑتا دکھائی دیا اور سونے پہ سہاگا مودی جی کی پرجوش جھپی نے تو انکل ٹرمپ اور مودی کے نویں نکور پیار پر سچائی کی مہر سی ثبت کر دی۔ہیوسٹن میں ہاؤڈی مودی نامی اس جلسے میں ہندوستانی وزیراعظم نے کشمیر میں ظلم و بر بریت اور انسانی حقوق کی پامالی کو اپنا اندرونی مسئلہ بول کہ مسلسل یہ ثابت کرنے کی کوشش کی کہ پاکستان نہتے لوگوں پر کیے جانے والےجبر مسلسل پر آواز اٹھا کر انکے اندرونی معاملات میں مداخلت کر رہا ہے۔اور پاکستان امن کا دشمن ہے دہشت گردوں کو پالتا پوستا ہے۔۔۔۔۔ان سب بے کار اور فالتو کلمات پر انکل ٹرمپ کی خاموشی اور مودی کی بے تکی باتوں کی تائید کے پیچھے کیا کھچڑی پک رہی تھی اس سے بھی پردہ اٹھنا ضروری ہے۔۔۔ جلسے کے بعد پھر جب امریکی صدر پاکستانی وزیراعظم سے ملتے ہیں تو محلے کی خالہ بنے مودی کی برائی کے ساتھ ساتھ عمران خان کی شخصیت کی تعریفوں کے پل اور مسئلہ کشمیر پر وہی ثالثی کی زبانی کلامی پیشکش کا الاپ۔۔۔بندہ پوچھے انکل ٹرمپ جی ثالث تو دو مخالفین کو ایک ٹیبل پر لاکے مسئلے حل کرواتا ہے پاکستان تو تیار ہے اب اپنے سفارتی ،تجارتی سیاسی اور بہترین ذاتی دوست بھارت کو بھی مذاکرات کا امن پسندانہ راستہ دکھاؤ ناں کہ جب بھی امن کی راہ نکلی ہندوستان نے سرحد پار سے گولے ہی داغے۔۔۔۔انکل جی ہم تو امن کے داعی ہیں تبھی تو انکا گرتا پڑتا پائلٹ کڑک چائے پلا کہ واپس بھیج دیا ہمیشہ جنگ کی مخالفت کی۔۔۔رہی بات دہشت گرد پالنے کی تو بالکل عالمی عدالت انصاف سے سرٹیفائیڈ ہندوستانی دہشت گرد کلبھوشن ہمارے پاس ہی تو ہے ناں جس نے پاکستان میں ہزاروں جانیں دہشت گردی کی عفریت میں جھونکی پھر بھی برے ہم۔۔۔ خیر بات ہو رہی تو ٹرمپ کی تو مت بھولیے کشمیر کے مظلوم عوام سے انہیں کوئی سروکار نہیں کرفیو لگے، نظام زندگی مفلوج ہو،بے گناہ شہری گرفتار ہوں،خواتین کی عزتیں پامال ہوں یا پھر معصوم بچے بھوک پیاس سے مر جائیں کیونکہ امریکہ اگر چاہے تو بھارت سے اس مسئلے کو حل کروانا اسکے لیے کوئی مشکل کام نہیں مگر ٹال مٹول اور منافقانہ رویہ نیت میں کھوٹ کی پکی والی نشانی ہے۔اور رہی بات ہاؤڈی مودی میں شرکت۔۔۔ تو یہ سنہری موقع تھا انکل ٹرمپ کے لیے کہ وہ 2020 میں ہونے والے صدارتی انتخابات کی دوڑ کے لیے انڈین نژاد امریکیوں کا دل جیت لیں۔ ہاں تو کچھ سمجھ میں آئیں اب انکل ٹرمپ کی چالاکیاں۔۔۔۔۔

تحریر ذکیہ نئیر

ذکیہ 2007 سے شعبہ صحافت سے وابستہ ہیں اور صحافی اور بلاگر ہیں ۔

۔۔۔۔