اسلام آباد : وزیر خارجہ شاہ محمودقریشی نے کہا کہ آلوکی قیمت میں کمی عالمی صورتحال کی وجہ سے ہےاور اپوزیشن کو پیشکش کی کہ کسانوں کی مدد کرنا چاہتے ہیں،آئیےمل بیٹھ کربات کرتے ہیں، تنقیدضرور کریں لیکن اتناحوصلہ کریں حکومتی نقطہ نظربھی سن لیاکریں۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے قومی اسمبلی اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے کسانوں کے احتجاج پر کہا درست ہے اس وقت آلو کا کاشتکار پریشان ہے،اتفاق کرتاہوں، اس وقت آلو کی قیمت گری ہوئی جس کی وجہ عالمی صورتحال بھی ہے، اس وقت بھارت میں ایک روپیہ کلو آلو فروخت ہورہا ہے۔

شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ ایگری کلچرکامعاملہ صوبائی ہے،برآمدات کامعاملہ وفاق میں آتاہے، آلوکوبرآمدکرناہےتواس معاملےپرمل بیٹھ گفتگوکی جاسکتی ہے، آلوکی برآمدسیاسی مسئلہ نہیں،اپوزیشن کےپاس تجاویزہیں تولائیں، تقریریں بےشک کریں لیکن عوامی مسائل مل بیٹھ کرحل کرتےہیں، تقریریں 8 ،10 اور کرلیں مجھے اعتراض نہیں لیکن ہمیں حل کی طرف جاناہے۔

کسانوں کی مددکرناچاہتےہیں،آئیےمل بیٹھ کربات کرتے ہیں،شاہ محمودقریشی کی اپوزیشن کو پیشکش
وزیر خارجہ نے کہا راجہ پرویزاشرف وزیراعظم رہےہیں انہیں عالمی صورتحال کااندازہ ہے، عالمی سطح پرآلوکی قیمت گرےگی تواس کانقصان پاکستان میں کاشتکاروں کو بھی ہوگا، آلو کی کم قیمت کامسئلہ یقینی ہے،کاشتکاروں کویقیناًنقصان ہورہاہے، آلوکی کم قیمت پریقیناًکاشتکاراحتجاج کرےگااورتوجہ چاہےگا۔

ان کا کہنا تھا کہ بی بی شہیدکےزمانےمیں بھی آلوکی کم قیمت کامسئلہ آیاتھا، بی بی شہیدنےبھی اپوزیشن کےساتھ بیٹھ کرمسئلےکاحل نکالاتھا، پی پی دورمیں آئی ایم ایف کےتحت ایگری کلچرپرجنرل سیلزٹیکس لگایاگیاتھا، پولیٹیکل پوائنٹ اسکورنگ ضرورکریں اس کےبعدبیٹھ کرمسئلہ حل کرتے ہیں۔

شاہ محمودقریشی نے کہا ایک طرف بھاشن دیاجاتاہےاٹھارویں ترمیم کورول بیک نہیں ہونے دیں گے، اٹھارویں ترمیم کورول بیک کرنےکی بات ہم تونہیں کرتے

اٹھارویں ترمیم کےتحت صوبوں اورمرکزکی ذمہ داریاں الگ ہیں، ایگری کلچربنیادی طورپرصوبائی معاملہ ہے، اخلاقی ذمہ داری کےتحت مرکزآپ سےکہتاہےآئیں بیٹھیں مسئلہ حل کریں۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا بلوچستان میں خشک سالی گلوبل وارمنگ کاحصہ ہے، خشک سالی پربلوچستان ڈیزاسٹرمینجمنٹ کواپناکرداراداکرناچاہیے، اٹھارویں ترمیم کےبعدصوبائی ڈیزاسٹرمینجمنٹ موجودہیں، بنیادی طورپریہ ذمہ داری صوبائی حکومت کی ہے، این ڈی ایم اےکہاں ذمہ داری اداکرسکتاہےاپوزیشن بتائے۔

تحریری فیصلہ ملتےہی کابینہ ای سی ایل کے معاملےپردوبارہ اجلاس کرےگی
انھوں نے کہا آئیں مل کربیٹھتےہیں کہ کیسےبلوچستان کی مددکرسکتےہیں،